جموں کشمیر میں اپنی پارٹی کا احتجاجی مارچ، الطاف بخاری نے کہا- حکومت نے دیا دھوکہ

انھوں نے کہا کہ اگر ایک سیاسی جماعت کو پُرامن احتجاج کی اجازت بھی نہیں دی جائے گی تو یہ کیسا نیا کشمیر ہے۔
سری نگر: جموں وکشمیر اپنی پارٹی کے احتجاجی مارچ کو سری نگر میں پولیس نے ناکام بنا دیا۔ پارٹی کے صدر سید الطاف بخاری اپنے کئی ساتھیوں کے ساتھ شیخ باغ سری نگر میں اپنی رہائش گاہ اور پارٹی دفتر سے احتجاج کی صورت میں برآمد ہوئے، لیکن پہلے سے وہاں موجود پولیس کے دستے نے انھیں پہلے رہایش گاہ کے باہر ہی روکا لیکن وہ چند گز آگے نکلنے میں کامیاب ہوئے اور بعد میں انھیں آگے جانے نہیں دیا گیا۔ پولیس کے روکے جانے پر اپنی پارٹی کے لیڈروں نے نعرہ بازی کی۔ یہ احتجاج جموں وکشمیر حد بندی کمیشن کی تجاویز کے خلاف کیا گیا۔
میڈیا سے بات چیت کے دوران اپنی پارٹی کے صدر سید الطاف بخاری نے کہا کہ جموں کشمیر میں نیا کشمیر کے نام پر دھوکہ کیا گیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اگر ایک سیاسی جماعت کو پُرامن احتجاج کی اجازت بھی نہیں دی جائے گی تو یہ کیسا نیا کشمیر ہے۔ الطاف بخاری نے کہا کہ حد بندی کمیشن پہلے ہی غیر قانونی طریقے سے بنایا گیا تھا اور بعد میں جموں میں چھ اور کشمیر میں ایک سیٹ کا اضافہ کرنے کی وجہ سے ان کی نیت صاف ہوگئی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں